Urdu News and Media Website

نوجوان نسل کو نظریہ پاکستان سے دورکیا جارہا ہے: رضائے الدین صدیقی ،ڈاکٹرطاہر حمید تنولی ،اکرم رضوی

لاہور(نیوزنامہ)احیائے نظریہ پاکستان کیلئے اساتذہ ،طلبہ کے علاوہ تمام محب وطن قوتوں کو میدان عمل میں نکل کر اپنا حقیقی کردار ادا کرنے کی اشد ضرورت ہے ۔موجودہ حالات میں نوجوان نسل کو نظریہ پاکستان سے دور کرکے پاکستان کی تعمیر کو تخریب میں تبدیل کرنے کی گھنائونی سازش کی جارہی ہے جو عناصر شروع دن سے قیام پاکستان کے مخالف تھے آج نظریہ پاکستان کے سلوگن کو ہائی جیک کرکے بانیان پاکستان کی شخصیات کو متنازعہ بنا رہے ہیں ۔ان خیالات کا اظہار سٹوڈنٹ سیکریڑیٹ ایوان خیر میںانجمن اساتذہ پاکستان کے ”احیائے نظریہ پاکستان سیمینار” سے آئیڈیالوجی آف پاکستان فورم کے سربراہ رضائے الدین صدیقی نے خطاب کرتے ہوئے کیا ۔ممتازدانشور ،ماہر اقبالیات ڈاکٹر طاہر حمید تنولی نے کہا کہ فکر اقبال ہی دراصل قیام پاکستان کا پیش خیمہ ہے ۔آج ہماری درسگاہوں میں وارثان علم و ادب کی ذمہ داری بنتی ہے کہ نسل نو کو پاکستان کے قیام کے پس منظر اور نظریہ پاکستان کے احیاء کیلئے اپنی صلاحیتوں کو برئوے کار لائیں کیونکہ احیائے نظریہ پاکستان ہی دراصل بقائے پاکستان ہے ۔ انجمن طلباء اسلام صوبہ پنجاب کے جنرل سیکریڑی محمد اکرم رضوی نے کہا یارسول اللہ کہنے والے پاکستان کی حقیقی قوت ہیں۔ وطن عزیز کو بیرونی سازشوں سے بچانے کے لئے محب وطن قوتوں کا اتحاد وقت کی اہم ضرورت ہے۔ پاکستان بنانے والے مشائخ کے فکری وارثین پاکستان بچانے کے لئے میدان میں آ گئے ہیں۔جس طرح طلباء نے تحریک پاکستان میں ہراول دستے کا کردار ادا کیا تھاآج ہم اعلان کرتے ہیں احیائے نظریہ پاکستان اور تعمیر پاکستان کیلئے وطن کی درسگاہوں میں طلباء کو بیدار کرنے کیلئے کوئی لمحہ ضائع نہیں کریں گے ۔انجمن اساتذہ پاکستان کے مرکزی سیکریڑی جنرل خالد نذیر نجمی نے صدارتی خطاب میں کہا کہ پورے پاکستان میں نظریہ پاکستان مہم کا آغاز کر دیا گیا ہے ۔نصاب تعلیم کی اشاعت کیلئے غیر ملکی امداد لینے کی بجائے ملکی وسائل سے تعلیم کو نظریاتی بنیادوں پر عام کرنے کیلئے اقدام کیاجائیں ۔نصاب سازی کو صوبائی سطح کی بجائے قومی سطح پر محب وطن ماہرین تعلیم کی نگرانی میں بورڈتشکیل دیا جائے ۔احیائے نظریہ پاکستان مہم کے رابطہ کار اور سابق مرکزی صدرسید ارشد حسین گیلانی نے کہا کہااحیائے نظریہ پاکستان مہم کے دوران پاکستان بھر سے محب وطن قوتوں کومتحد کیا جائے گا ۔نصاب تعلیم سے اسلامی اشعار کے خاتمے اور بانیان پاکستان کی بجائے مخالفین پاکستان کے تذکرے شامل کرناپاکستان کی بنیادوں کو کھوکھلا کرنے کے مترادف ہے ۔سیمینار سے سابق مرکزی صدر محمد قاسم علوی ،محمد اسحاق رحمانی ،محمد فاروق صدیقی ،طیب شیخ ،نعمان ملک اور دیگر مقررین نے بھی خطاب کیا ۔سیمینار میں منظور کی گئیں قراردادوں میں مطالبہ کیا گیا کہ نصاب تعلیم کو فکری ہم آہنگی دینے کیلئے تعلیم کے نام پر بیرونی امداد بند کی جائے ۔نصاب تعلیم صوبوں کی بجائے قومی سطح پر مرتب کیا جائے ۔ نئے قومی بیانیہ میں شناختی کارڈ اور پاسپورٹ سے مذہبی شناخت ختم کرنے کی تجویز واپس لی جائے۔ امریکی صدر بیت المقدس کو اسرائیل کا دارالحکومت بنانے کا متنازعہ فیصلہ واپس لے۔ مسلم اُمّہ کے مسائل کے حل کے لئے اسلامی سربراہی کانفرنس طلب کی جائے۔ مظلوم روہنگیا مسلمانوں کی نسل کشی روکنے کے لئے اقوام متحدہ اور مسلم حکمران اپنا کردار ادا کریں۔ ختم نبوت حلف نامہ میں تبدیلی کے ذمہ داروں کو بے نقاب کر کے عبرت کا نشان بنایا جائے۔ ملک میں نظام مصطفے نافذ کیا جائے۔ قادیانیوں کو کلیدی عہدوں سے الگ کیا جائے۔ نیشنل ایکشن پلان پر عملدرآمد یقینی بنایا جائے۔ اقوام متحدہ مقبوضہ کشمیر اور فلسطین میں انسانی حقوق کی پامالیوں کا نوٹس لے۔ راجہ ظفرالحق کمیٹی کی رپورٹ منظرعام پر لا کر ختم نبوت حلف نامہ تبدیل کرنے والوں کو عبرت کا نشان بنایا جائے۔ اقوام متحدہ کنٹرول لائن پر آئے روز بھارتی فائرنگ کا نوٹس لے۔

تبصرے