Urdu News and Media Website

شام کے معصوم نہتے بچوں عورتوں کے قتل عام پر اشرف عاصمی ایڈووکیٹ کی لاہور ہائی کورٹ بار میں علامتی بھوک ہڑتال

لاہور(نیوزنامہ) شام (غوطہ ) کے معصوم نہتے بچوں عورتوں کے قتل عام، اسلامی دُنیااور اقوام متحدہ کی بے حسی کے خلاف انسانی حقوق کے علمبردار اشرف عاصمی ایڈووکیٹ نے لاہور ہائی کورٹ بار میں علامتی بھوک ہڑتال کی ۔اِس موقع پر وکلاء سے خطاب کر تے ہوئے صاحبزادہ میاں محمد اشرف عاصمی ایڈووکیٹ نے کہا کہ شام میں 6 سال سے جاری خانہ جنگی میں اب تک پانچ لاکھ جانیں جا چکی ہیں۔ اس قتل و غارت گری کی وجہ سے شام کو سال کا مہلک ترین ملک قرار دیا گیا تھا۔اقوام متحدہ نے دنیا سے اپیل کی ہے کہ 1,80,000مقامی شامی افراد کو طبی امداد کی اشد ضرورت ہے۔ 6 سال سے جاری اس خانہ جنگی میں پانچ لاکھ افراد کی جانین جا چکی ہیں اور لاکھوں افرادبے گھر ہو چکے ہیں اور ابھی بھی اس خانہ جنگی کے ختم ہونے کے کوئی آثار نظر نہیں آ رہے۔غوطہ شام میں ظلم مسلسل جاری ہے۔ قتل و غارت کی ایسی تصاویر اور ویڈیوز منظر عام پر ہیں جنہیں دیکھ کر انسانیت کانپ اٹھتی ہے۔ حملوں میں بوڑھوں، خواتین اور بچوں کو بھی نہیں بخشا جا رہا ہے۔ بربریت کا یہ عالم ہے کہ نہتھوں پر کیمیائی ہتھیار وں تک کا استعمال کیا جارہا ہے۔ شام کے شہر غوطہ میں اسد کا اتحادی روس اپنے ہتھیاروں کی مشق کے لئے معصوموں کو موت کے گھاٹ اتار رہا ہے۔ سینکڑوں بچے غوطہ کی حالیہ بمباری میں جاں بحق ہو گئے ہیں۔صاحبزادہ میاں محمد اشرف عاصمی ایڈووکیٹ نے اپنے خطاب میں مزید کہا کہ شام میں مسلسل حملوں میں انسانی جانوں کے ضیاع پر دنیا بھر کے مسلمانوں میں بے چینی کا ماحول ہے۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.