Urdu News and Media Website

ڈھلتی شام

ڈھلتی شام

طویل مسافت

وحشت ذدہ ناگ

تاک میں بیٹھے گدھ

اور وہ اجنبی مسافر

شاید کہ آیا تھا

کسی دور پار کے شہر سے

بدن تار تار

لہو رستا ہوا

جبر مسلسل کا قیدی

انتظار کی سولی پہ لٹکا

ندی کنارے،

کسی سوچ میں تھا ڈوبا

کبھی ہنستا

کبھی روتا

کوئی پاگل تھا شاید

انسانوں کی بستی کا

ڈسا ہوا۔۔۔۔۔

نکالا ہوا، بھٹکا ہوا ۔۔۔

اسماء طارق

Asma Tariq

یہ بھی پڑھیں: آج بھی ہر اتوار،،، سر شام ،،، وہ ناگن پھن پھلائے

 

یہ بھی پڑھیں: کل عرصے بعد ،،،،، تم کو جاتے دیکھا

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.