Urdu News and Media Website

ٹرمپ نے سابق صدر اوباما کو جیل بھیجنے کا مطالبہ کر دیا

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے سابق امریکی صدر براک اوباما اور نائب صدر جو بائیڈن کو جیل بھیجنے کا مطالبہ کر دیا۔

ڈیلی میل کے مطابق ٹرمپ نے اوباما کو سراسر نا اہل امریکی صدر قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ وہ اور ان کے نائب صدر جو بائیڈن کرپٹ ہیں، دونوں کو جیل بھجوایا جانا چاہیے۔

ڈونلڈ ٹرمپ نے ایک انٹرویو میں کہا کہ براک حسین اوباما اور
سابق نائب صدر جو بائیڈن ‘ہیرو’ مائیکل فلن کو بے نقاب کرنے
میں ملوث تھے۔ اس کے بعد اپنے ایک ٹویٹ میں ٹرمپ نے
کہا کہ سابقہ کرپٹ ایڈمنسٹریشن کی وجہ سے
امریکی عوام نے میرا انتخاب کیا۔

ٹرمپ کا کہنا تھا کہ مائیکل فلن کو بے نقاب کرنا امریکی تاریخ
میں سب سے بڑا سیاسی جرم تھا، اگر میں ریپبلکن کی جگہ ڈیموکریٹ
ہوتا تو بہت پہلے اس کیس میں ملوث ہر شخص
جیل پہنچ چکا ہوتا، وہ بھی 50 سال کے لیے۔

یہ بھی پڑھیں: بھارت افغانستان میں ہمیشہ غداروں کا مدد گار رہا ہے: افغان طالبان

خیال رہے کہ سابق قومی سلامتی مشیر مائیکل فلن نے اپنا جرم
قبول کر لیا تھا کہ انھوں نے روس کے ساتھ تعلقات کے سلسلے
میں ایف بی آئی کو جھوٹ بولا تھا، ان کے خلاف 2016 میں
امریکی انتخابات میں روس کی مداخلت کے حوالے سے
تحقیقات کی گئی تھیں۔ بعد میں مائیکل فلن صدر ٹرمپ کی
انتظامیہ میں قومی سلامتی کے مشیر کے عہدے پر تعینات
ہو گئے تھے، اس دوران ان پر فرد جرم عائد کیا گیا تھا،
اور اب ڈونلڈ ٹرمپ نے انھیں ہیرو قرار دے دیا ہے۔

یہ بھی پڑھیں: ٹرمپ کا امریکا میں امیگریشن عارضی طور پر معطل کرنے کا اعلان

مبینہ طور پر اوباما اور جو بائیڈن نے ایف بی آئی سے فلن کی

شناخت بے نقاب کرنے کی درخواست کی تھی، جنھیں اس
بارے میں علم تھا کہ ایف بی آئی فلن کے خلاف تحقیقات
کر رہی ہے۔ جنرل مائیکل فلن کے خلاف کیس ختم کیے
جانے کو ٹرمپ نے سراہا۔ انھوں نے کہا کہ یہ سب کیا
دھرا اوباما اور بائیڈن کا تھا، یہ لوگ کرپٹ اور سراسر نا اہل
تھے، سارا معاملہ ہی کرپٹ تھا اور ہم نے انھیں پکڑ لیا ہے،
انھی کی وجہ سے میں آج وائٹ ہاؤس میں ہوں۔

واضح رہے کہ سابق نائب صدر جو بائیڈن 2020 کے
صدارتی انتخابات میں ڈونلڈ ٹرمپ کے بڑے حریف ہیں۔
واشنگٹن(ویب ڈیسک)

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.