Urdu News and Media Website

25 من سے زائد گندم رکھنے والے ہوشیار

حکومت نے تا حکم ثانی تمام فوڈ گرین لائسنس معطل کر دیے ہیں اس لیے اب 25 من سے زیادہ گندم کا سٹاک جرم ہو گا ۔

گندم کی بین الصوبائی اور بین الاضلاعی پابندی ہو گی ،یعنی صوبہ بندی اور ضلع بندی ہو گی جب تک حکومت پنجاب کا ٹارگٹ پورا نہ ہو جائے۔

یہ بھی پڑھیں: ایل او سی کی خلاف ورزی: پاک فوج نے بھارتی جاسوس کواڈ کاپٹر مار گرایا

ہر فلور مل کو صرف 3 دن کی گندم خریدنے کی اجازت ہو گی اس کے لیے بھی
حکومت پنجاب ان ملز کو اک پاس جاری کرے گی جو پاس ٹرک کے ساتھ ہو گا
کسی ناکے پہ وہ پاس دکھا کر ہی گندم کا ٹرک ضلع کے باہر جا سکے گا ،حکومت کے
نمائندے ہر فلور مل میں گندم کا سٹاک ہر روز چیک کریں گے اس کے بعد ہی
اس مل کو نیا پاس جاری ہو گا ،اس بار کرونا وائرس کی وجہ سے فوڈ گودام میں رش
نہ پڑے اس کے لیے باردانہ درخواست بذریعہ موبائل اپلیکیشن وصول کی جائیں
گی۔

یہ بھی پڑھیں: پاکستان کرونا وائرس کا علاج دریافت کرنے والے ممالک میں شامل

حکومت اس بار گندم کی خرید جلد شروع کر دی جائے گی اس لیےگندم کی نمی بھی
چیک کی جائے گی 10% سے جتنی اوپر نمی ہو گی اتنے کلو پر بوری کھوٹ لگے گی
گند م کی قیمت 1400 روپے فی من مقرر۔
اسلام آباد(صابر مغل)

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.