Urdu News and Media Website

آٹا اور چینی بحران ، ملک کی اہم شخصیات ملوث نکلیں، ہوشربا انکشافات

پاکستان میں آٹے اور چینی بحران کے اصل اور مرکزی کردار سامنے آگئے،پی ٹی آئی حکومت اور معتبر اتحادی بھی شامل ۔

تفصیلات کے مطابق وزیراعظم عمران خان نے گذشتہ ماہ ملک بھر میں اچانک آٹے اور چینی کے بحران پر سخت نوٹس لیتے ہوئے ذمہ داران کے تعین کے لیے ڈی جی ایف آئی اے واجد ضیاء کی سربراہی میں انکوائری ٹیم تشکیل دیتے ہوئے قوم سے کہا تھا کہ اصل اور ذمہ داران کو بے نقاب کرتے ہوئے بهر پور قانونی کارروائی کی جائے گی۔
اس بحران کے مرکزی کردار سابق وزیراعظم پاکستان کے حمایتی اور
پنجاب بیوروکریسی کے ہیڈ سیکرٹری اور شہباز شریف کے رائٹ ہینڈ نسیم صادق نکلے۔
اس بحران میں جہانگیر ترین ،خسرو بختیار اور چوہدری منیر سمدھی مریم نواز سمیت اور
اہم شخصیات بھی شامل ہیں۔

یہ بھی پڑھیں: وزیراعظم عمران خان کا تعمیراتی سیکٹر کیلئے بڑ ے پیکج کا اعلان

ایف آئی اے کی تحقیقاتی رپورٹ کے مطابق شوگر ایکسپورٹ پالیسی کے تحت

چینی پر سبسڈی کا سب سے زیادہ فائدہ جہانگیر ترین نے اٹھایا۔
جہانگیر ترین کے جے ڈی ڈبکی گروپ نے 56 کروڑ روپے کی سبسڈی حاصل کی۔
انکوائری کمیٹی نے شوگر ملز اور اسکی کی بھی نشاندہی جس کی وجہ سے مقدس ماہ رمضان میں
چینی کی قیمت 100 روپے فی کلو گرام تک پہنچ سکتی تھی۔حکومت کی جانب سے
تشکیل کردہ کمیشن اب شوگر انڈسٹری کا فرانزک آڈٹ بھی کرے گا جس سے
ملک کی زرعی پالیسی مرتب کرنے میں بھرپور مدد ملے گی۔

یہ بھی پڑھیں: آٹا کےبعد چینی بھی مہنگی،قیمتوں میں کتنا اضافہ ہوا،عوام سرپکڑ لیں گے

وفاقی وزیر خسرو بختیار کے بھائی عمر شہر یار کے گروپ نے 35 کروڑ،
المعیز گروپ نے 40 کروڑ،اے آر وائی گروپ نے 4 ارب،
جہانگیر ترین نے 3 ارب،ہنزہ گروپ 2 ارب 80 کروڑ ،
فاطمہ گروپ نے 2 ارب 30 کروڑ،شریف گروپ نے ایک ارب 40 کروڑ،
اومنی گروپ نے 90 کروڑ روپے سبسڈی کا فائدہ اٹھایا،
مئی 2014 سے جون 2019 تک پنجاب حکومت نے چینی پر سبسڈی
دینے کا فیصلہ کیا۔ اس عرصہ میں چینی کی قیمت میں 16 روپے فی کلو گرام اضافہ ہوا
جس پر برآمد کنندگان نے اربوں روپے کا فائدہ اٹھایا اور بحرانی کیفیت پیدا ہوتی رہی۔

یہ بھی پڑھیں: گندم اور آٹا چوہے کھا گئے یا شیطان؟

واضح رہے کہ گزشتہ 5 سال میں چینی کی برآمد پر 25 ارب روپے کی سبسڈی دی گئی ہے۔
اسلام آباد(صابر مغل)

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.