Urdu News and Media Website

ستاروں کے جیسے

یہ  تو  آپ  جانتے  ہی  ہونگے  کہ  ہر  چیز  کی  طرح  ستارے  بھی    مدار وں  میں  گردش  کر  رہے  ہیں  اور  یہ  مدار  کسی  اور  محور  کا  طواف  کر  رہے  ہیں۔  

جب  تک  وہ  اپنے  مدار  میں  رہتے  ہیں  نا  تو  چمکتے  دمکتے  رہتے  ہیں۔  آسمان  کو  خوبصورتی  دیتے  ہیں  اور  اپنی  زندگی  کا  چکر  مکمل  کرتے  ہیں۔  مگر  جب  بھی  وہ  کسی  دوسرے  ستارے  کے  مدار  میں  غلطی  سے  قدم  رکھ  دیں  تو  وہ  دوسرے  ستاروں  سے   ٹکرا  کر  تباہ  ہو  جایا  کرتے  ہیں  اور  اپنی  روشنی  کھو  دیتے  ہیں۔ 

ہم  انسان  بھی  تو  ستاروں  جیسے  ہی  ہیں ۔  ہاں  نا!  ہم  بھی  تو   ستاروں  جیسے  ہی  ہیں ۔  

ہم  سب  بھی  اپنے  اپنے  مداروں  میں  گھوم  رہے  ہیں۔

  اور  ہمارے  مدار  کسی  اور  محور  کے  گرد  چکر  لگا  رہے  ہیں۔

  اور  جانتے  ہو  کہ  وہ  محور  کیا  ہے ؟  وہ  محور  کامیابی  ہے۔

یہ بھی پڑھیں: کل عرصے بعد ،،،،، تم کو جاتے دیکھا

  ہم  سب  اپنے  اپنے  مداروں  میں  کامیابی  کے  گرد  چکر  لگاتے  رہتے  ہیں۔  

ہر  مدار  کا  کامیابی  کو  چھونے  کا  وقت  مختلف  ہے۔

  ہر  مدار  کامیابی  کے  محور  سے  الگ  فاصلے  پر  ہے۔

  جب  کسی  مدار  میں  کوئی  ایک  شخص  کامیابی  کے  محور  کو  چھو  لیتا  ہے

  نا  تو  سب  لوگ  اپنے  مدار وں  کو  خالی  چھوڑ  کر  اس  مدار  کی  طرف  چل  پڑتے  ہیں ۔

  ہم  یہ  سوچتے  ہی  نہیں  کہ  کامیابی  تو  ہمیں  ہمارے  مدار  میں  ہی  مل  سکتی  ہے ۔ 

یہ بھی پڑھیں: دنیا کو ایٹمی جنگ کی تباہی سے بچانے والی لڑکی

ہم  محض  اپنے  مدار  میں  رہتے  ہوئے  چمک  سکتے  ہیں ۔  

دوسرے  مدار  میں  تو  ہمیں  محض  تباہی ,  اندھیرا  اور  پچھتاوا  ہی  مل  سکتا  ہے

  بالکل  جیسے  کہ  ستاروں  کے  ساتھ  ہوتا  ہے۔

  اسی  لئے  تو  اپنا  مدار  نہیں  چھوڑنا  چاہئیے۔

جانتے  ہو  ہمیں  کیا  کرنا  چاہئیے  ہمیں  اپنی  باری  کا  انتظار  کرنا  چاہیے۔ 

 صبر  سے  محنت  کرنی  چاہیے  کیونکہ  ہم  نہیں  جانتے  ہمارا  مدار  

کس  وقت  کامیابی  کے  محور  سے  کتنا  دور  ہے۔  

کیا  پتا  ہماری  آنکھیں  اس  وقت  دوسرے  کی  کامیابی  سے  چندھیا  گئی  ہو

  جب  ہماری  کامیابی  سے  دوسروں  کی  آنکھیں  چندھیانے  کا  وقت  قریب  ہو۔

  کیا  پتا  ہم  اس  وقت  اپنی  محفوظ  پناہ  گاہ  چھوڑ  دیں  جب  ہمارا  آسمان

  کا  سب  سے  روشن  ستارا  بننے  کا  وقت  بے  حد  قریب  ہو۔  

یہ بھی پڑھیں: کرونا وائرس اور مجنوں کی ہدایت

کیا  پتا  ہماری  محنت  کا  پھل  قریب  ہو ۔  

یہ  سب  ہم  میں  سے  کوئی  نہیں  کہ  ہم  کس  وقت  کامیابی  سے  کتنی  دور  ہیں

   مگر  ایک  بات  جو  میں  جانتی  ہوں  پتا  کیا  ہے  کہ  ہمیں  یقین  رکھنا  چاہیے

  محنت  کا  پھل  ملتا  ہے  اور  ضرور  ملتا  ہے  کیونکہ  کوئی  ہے

  جو  ہماری  کوششوں  کو  دیکھ  رہا  ہے  اور  وہی  مداروں  کی  چالوں

  کا  حاکم  ہے  وہ  ہمیں  رسوا ء  نہیں  کرے  گا۔  

ہاں !  ایک  آخری  بات  محنتوں  کا  صلہ   ہمیں  صرف  ہمارے  اپنے  مدار  میں  ملے  گا  اور  کہیں  نہیں۔

تحریر:اریج صابر۔۔۔  

 

نوٹ: نیوز نامہ پر شائع ہونے والی تحریریں لکھاری کی ذاتی رائے ہے،ادارے کا متفق ہونا ضروری نہیں۔

 

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.