Urdu News and Media Website

یوم استحصال کشمیر، لاہور میں بھارت کیخلاف احتجاجی مظاہرہ

لاہور(نیوزنامہ) کشمیرسنٹرلاہور کے زیراہتمام5اگست 2019ء کے بھارتی اقدام کے 2برس پورے ہونے پر یوم استحصال کے موقع پر بھارت کے خلاف احتجاجی مظاہرہ سے خطاب کرتے ہوئے مقررین نے کہاہے کہ بھارت مقبوضہ کشمیر پر اپنا قبضہ زیادہ دیر تک قائم نہیں رکھ سکتا۔

 

بھارت نے 5اگست 2019ء کو کشمیر کی خصوصی حیثیت ختم کردی لیکن دوسال گزرنے کے بعد بھی کشمیری عوام بھارت کے مزموم مقاصد کی تکمیل میں سیسہ پلائی ہوئی دیوار کی طرح کھڑے ہیں۔

مظاہرے سے انچارج کشمیر سنٹر لاہور سردارساجدمحمود، کل جماعتی حریت کانفرنس کے رہنما انجینئر مشتاق محمود، آل کشمیر فورم کے رہنما سفیراحمدخان عباسی ،محمدشہبازخان، انعام الحسن اور دیگر نے خطاب کیا۔

سردار ساجد محمود نے کہا کہ بھارت سمجھتا ہے کہ وہ ظلم وجبر سے کشمیری عوام کو دبا لے گالیکن یہ اس کی بھول ہے۔

کشمیریوں نے پچھلے تہتر برسوں سے بھارت کے غاصبانہ قبضے کو تسلیم نہیں کیا۔

انھوں نے کہا کہ کشمیری عوام ریاست جموں وکشمیر پر غاصبانہ قبضہ جماکر اپنے آئین کا حصہ بنانے کے غیرقانونی اقدام کی بھی بھرپور مذمت کرتے ہیں

اور آج وہ بھارت کی جانب سے مقبوضہ جموں وکشمیر کی خصوصی حیثیت کے خاتمے جیسے گھناؤنے اقدام کو بھی قبول کرنے پر تیار نہیں

بلکہ وہ اس کے خلاف سخت احتجاج جاری رکھے ہوئے ہیں۔

انجینئرمشتاق محمود نے کہا کہ بھارت آئین کی خصوصی دفعات کی منسوخی اور مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت کے خاتمے کے ذریعے مقبوضہ جموں کشمیر میں مسلم آبادی کا تناسب بگاڑ کر ہندوئوں کو آبادکرنا چاہتاہے

تاکہ کل کو جب اقوام متحدہ کی قراردادوں کی روشنی میں استصواب رائے کروایا جائے تو فیصلہ اس کے حق میں آئے۔

انھوں نے کہا کہ پچھلے دوبرسوں سے سینکڑوں کشمیری جوانوں نے بھارت کے اس اقدام کے خلاف احتجاج کرتے ہوئے اپنی جانوں کا نذرانہ پیش کیا ہے۔

ہم کبھی بھارت سے ڈرنے والے نہیں ۔ وہ لاکھ ظلم ڈھائے اور عالمی برادری کو گمراہ کرنے کے لیے اقدامات کرتا پھرے لیکن اسے اپنے مذموم مقاصد میں ضرور ناکامی ہوگی۔

سفیر احمدخان عباسی نے کہا کہ مقبوضہ جموں وکشمیر کا مستقبل پاکستان کے ساتھ وابستہ ہے۔

آٹھ لاکھ قابض بھارتی فوج کشمیری عوام کو ان کے عظیم مقصد سے پیچھے ہٹانے میں کامیاب نہیں ہوسکی ۔

ان شاء اللہ وہ دن دور نہیں جب مقبوضہ جموں وکشمیر سارے کا سار ا آزاد ہوکر پاکستان کا حصہ بنے گا۔

اس موقع پر شرکاء نے بھارت کے خلاف نعرے لگاتے ہوئے مطالبہ کیا کہ بھارت جلد ازجلد اپنی فوجیں مقبوضہ جموں وکشمیر سے باہرنکالتے ہوئے استصواب رائے کے لیے فضا ہموار کرے تاکہ اقوام متحدہ کی روشنی میں کشمیریوں کو ان کا پیدائشی حق حق خودارادیت حاصل ہوسکے ۔

تبصرے