Urdu News and Media Website

ہم نے کبھی وہ این آر او نہیں کیا جو پیپلز پارٹی نے کیا: احسن اقبال

کوئٹہ (نیوزنامہ) وفاقی وزیر داخلہ احسن اقبال نے کہا ہے کہ ہم نے کبھی وہ این آر او نہیں کیا جو پیپلز پارٹی نے کیا ، پارلیمنٹ کی مدت مکمل ہونے پر دوسرا سنگ میل عبور کریں گے،اس وقت ملک کو انتشار کی نہیں یکجہتی کی ضرورت ہے،بھارت پاکستان کے خلاف افغان سرزمین استعمال کر رہا ہے، سی پیک کو ناکام بنانے کے لئے بھارت کروڑوں ڈالر استعمال کررہا ہے،کوئٹہ چرچ جیسے واقعات سرحد پار سے دراندازی سے کیے جاتے ہیں،کلبھوشن کے معاملے پر پاکستان نے اعلی ظرفی کا مظاہرہ کیا لیکن بھارت نے اسی روز اپنی سوچ کا مظاہرہ ایل او سی کی خلاف ورزی کرکے دیا، کوئٹہ ایگزیکٹو پاسپورٹ آفس کی تعمیر پر ایک کروڑ 80 لاکھ روپے لاگت آئی۔ جمعرات کو کوئٹہ کے پہلے ایگزیکٹو پاسپورٹ آفس کے افتتاح کے بعد میڈیا سے بات کرتے ہوئے احسن اقبال نے کہا کہ سیاسی استحکام ملکی ترقی کے لئے آکسیجن کی طرح ضروری ہے، طاہر القادری اور اپوزیشن اے پی سی کو دھرنے کے بجائے قومی یکجہتی کی اے پی سی بنائیں۔وفاقی وزیر داخلہ نے کہا کہ ایک دوسرے کی ٹانگ کھینچا ملک کو ڈبو دیتا ہے، پاکستان کو مضبوط کرنے میں استحکام رکھنا ہے اور اس کیلیے کام کرنا ہے۔احسن اقبال نے کہا کہ 2013 میں دہشت گردی اس قدر تھی کہ بلوچستان، کراچی کی شاہراہیں غیرمحفوظ تھیں اور 4 سال بعد بلوچستان سے اغوا برائے تاوان کی آوازیں نہیں سنی جب کہ گوادر سے کراچی اور دیگر شاہراہوں پر لوگ بلا خوف سفر کرتے ہیں۔انہوں نے کہا کہ ہمارا ہمسایہ ملک بھارت افغانستان کی سرزمین استعمال کر کے سی پیک کو ناکام بنانا چاہتا ہے جب کہ جاسوس کلبھوشن یادیو نے اعتراف کیا کہ سی پیک کو ناکام بنانے کے لئے بھارت کروڑوں ڈالر استعمال کررہا ہے۔ انہوں نے کہا کلبھوشن کے معاملے پر پاکستان نے اعلی ظرفی کا مظاہرہ کیا لیکن بھارت نے اسی روز اپنی سوچ کا مظاہرہ ایل او سی کی خلاف ورزی کرکے دیا، وزیر داخلہ نے کہا کہ ہمارا مقابلہ بھارت اور خطے کے دیگر ممالک سے معیشت کے میدان میں ہے، معیشت مضبوط ہوگی تو کوئی ملک میلی نگاہ سے نہیں دیکھ سکتا۔وزیرداخلہ احسن اقبال نے ایگزیکٹو پاسپورٹ آفس کے مختلف شعبوں کا بھی معائنہ کیا اور کہا کہ کوئٹہ ایگزیکٹو پاسپورٹ آفس کی تعمیر پر ایک کروڑ 80 لاکھ روپے لاگت آئی۔انہوں نے بتایا کہ کوئٹہ ایگزیکٹو پاسپورٹ آفس بلوچستان کا پہلا پاسپورٹ آفس ہے جہاں جدید ترین سہولتیں دی گئی ہیں جب کہ اسے 4 ماہ کی ریکارڈ مدت میں تعمیر کیا گیا۔وفاقی وزیر داخلہ نے کہا کوئٹہ ایگزیکٹو پاسپورٹ آفس میں بیک وقت 80 افراد کو سروس دی جاسکے گی اور ایک پاسپورٹ کی تیاری میں 20 سے 25 منٹ لگیں گے جب کہ خواتین اور مردوں کے لئے الگ الگ جگہ ہے تاکہ دشواری نہ ہو۔

تبصرے