Urdu News and Media Website

ننھی زینب و دیگرمعصوم بچیوں کے قاتلوں کو سر عام پھانسی دی جائے: سیمل را جہ

سیاسی جماعتیں ہماری لاشوں و عزتوں پر سیاست چمکانہ بند کریں: سونیا نعمان ،نبیلہ بٹ،فضیلت ریاض،درشن پروین،عابدہ منظور

لاہور(وقاص سکھیرا)نیو ہوپ ویلفئیر آرگنائزیشن کی عہدیداران چئیر پرسن سیمل راجہ، کوارڈینیٹرز سونیا نعمان ، نبیلہ بٹ، عابدہ منظور، درشن پروین اور فضیلت ریاض نے نیوزنامہ فورم میں گفتگو کرتے ہوئے مطالبہ کیا کہ خواتین و بچوں کے اغوا و زیادتی کے مجرمان کو سر عام پھانسی پر لٹکایا جائے۔ خواتین اوربچوں پرظلم و زیادتی کے کیسز کی کاروائی میں تاخیری حربے استعمال کرنے والے افسران و اہلکاروں کے خلاف کارروائی کی جانی اشد ضروری ہے تاکہ عصمت فروشی اور اقدام قتل کے اس گھناونے دہندے میں ملوث مجرمان کو قرارواقعی سزا دلوا کر اس بڑھتی ہوئی معاشرتی لعنت سے چھٹکارا حاصل کیا جا سکے۔نیو ہوپ ویلفئیر آرگنائزیشن کی چئیرپرسن سیمل راجہ نے کہا کہ حوا کی بیٹی کی تذلیل اور استحصال اشرافیہ کا شیوہ بن چکا ہے۔قانون کی حکمرانی اور انصاف کی فراہمی کے بغیر ہم اپنی نئی نسل کوترقی یافتہ معاشرہ فراہم نہیں کر سکتے۔چند امیر زادوں، سیاستدانوں،وڈیروں اور سرمایہ داروں کے تحفظ کیلئے قوانین بنانا حکمرانوں کیلئے شرمندگی کا باعث ہے جو کہ ملک و قوم کے حقوق تحفظ اور ریاست کے ساتھ غداری کے مترادف ہے۔ انہوں نے کہا کہ قصور میں پہلے بھی 300 بچوں کے ساتھ جنسی زیادتی اور ان کی ویڈیوز بنا کر فروخت کرنے کا واقعہ پیش آچکا ہے، جبکہ زینب سے پہلے 11 بچیوں کو اسی طرح زیادتی کا نشانہ بنایا گیا جو کہ انتہائی شرمناک ہے۔ انہوں نے کہا کہ زینب پوری قوم کی بیٹی ہے اسکے مسکراتے چہرے کی تصویر نے دنیا بھر میں لوگوں کو دکھی کر دیا،ننھی زینب و دیگرمعصوم بچوں کے قاتلوں کو سر عام پھانسی دے کر نشان عبرت بنایا جائے۔ انہوں نے کہا کہ حوا کی بیٹیوں کی عزتوں اور لاشوں پر قہقے لگانے اور تالیاں بجانے والے ہوش کے ناخن لیں۔ عاصمہ ، زینب،کائنات، بتول، نور فاطمہ و دیگر ہم سب کی بیٹیاں ہیں۔انہوں نے پوری پاکستانی قوم سے حوا کی بیٹی کی تذلیل کرنے والے دجالوں کے خلاف آواز اٹھانے اور ان کو بے نقاب کر کے آنے والی نسلوں کو بچانے کی جدوجہد میں ساتھ دینے کی اپیل کی۔ چیف آرگنائزر پنجاب سونیا نعمان نے کہا کہ خواتین و بچوں کو جنسی طور پر ہراساں کیے جانے کے واقعات رکنے کا نام ہی نہیں لے رہے سیاسی جماعتیں ہماری لاشوں و عزتوں پر سیاست چمکانہ بند کریں۔انہوں نے وزیر اعلیٰ پنجاب شہباز شریف کی پریس کانفرنس میں حکمرانوں کی جانب سے جشن منانے پر افسوس اور غم و غصہ کا اظہار کرتے ہوئے اسے نامناسب قرار دیا اور کہا کہ سیاستدانوں اور حکمرانوں کو عوامی مسائل سے کوئی غرض نہیں وہ صرف ذاتی مفادات کے حصول اور ایک دوسرے پر الزام تراشیاں کرنے میں سرگرم ہیں۔خواتین و بچیوں کے ساتھ ہونے والی جنسی زیادتی کے واقعات میں اضافہ حکمرانوں، سیاستدانوں و ریاستی اداروں کی بے حسی اورکرمنل جسٹس سسٹم کے مضبوط نہ ہونیکے باعث ہے جس کی وجہ سے انسانیت شرمسار ہے۔ انہوں نے کہا کہ خواتین و بچوں کی عصمت فروشی کے گھنونے دھندے میں ملوث اشرافیہ کے کالے کرتوتوں کے باعث قوم فحاشی، عریانی، بے حیائی اور بے راہ روی کے اندھیروں میں ڈوبتی جا رہی ہے۔جنوبی پنجاب کی آرگنائزر نبیلہ بٹ نے کہا کہ اسلامی ملک اور اسلامی
معاشرہ میں حوا کی بیٹیوں کا استحصال اور ان کی تذلیل کوئی عام بات نہیں۔ اشرافیہ کا ٹولہ موجودہ ملکی حالات کا زمہ دارہے ۔انہوں نے مطالبہ کیا کہ زینب قتل کیس میں اگر اس ملزم کی پشت پر کوئی گینگ کام کررہا تھا تو اسے بھی عوام کے سامنے لایا جائے کیونکہ ہوسکتا ہے کہ یہ کام اس شخص سے دباو کے تحت کروایا جاتا ہو۔ انہوں نے کہا کہ حکومت اور پولیس پرسے عوام کا اعتبار اٹھ چکا ہے کیونکہ زینب کے قتل کے بعد جو کچھ قصور میں ہوا، وہ سب نے اپنی آنکھوں سے دیکھا ہے۔ درشن پروین ، عابدہ منظور،فضیلت ریاض اور منظوراں فضل نے کہا کہ پاکستان جیسے اسلامی ملک میں بچوں کا ریپ کر کے ان کی ویڈیوز بنا کر باہر فروخت کی جاتی ہیں جوکہ یقیناً ہم سب کے لیے باعث شرم ہے اور یہ بھی ممکن ہے کہ ان معصوم بچیوں کی بھی ویڈیو زبنائی گئی ہوں۔انہوں نے کہا کہ پوری قوم کا مطالبہ ہے کہ حوا کی بیٹیوں کے ساتھ ظلم و زیادتی کے ذمہ داران خواہ کتنے ہی طاقتوار کیوں نہ ہوں ان کو عبرتناک سزا دی جائے اور جوان کی پشت پناہی کرنے والے درندوں کے مکروہ چہرے بے نقاب کر کے قوم کے سامنے لائے جائیں۔انہوں نے کہا کہ حوا کی بیٹیوں کے مجرموں کے خلاف شریعت کے مطابق سزا اور جزا کا مساوی سلسلہ شروع نہ کیا گیاتو قوم ہمیشہ مختاراں مائی، زینب انصاری، عائشہ آحد، کائنات، سونیا اوردیگر حوا کی بیٹیوں کے لئے انصاف ہی مانگتی رہ جائے گی ۔

تبصرے