Urdu News and Media Website

توبہ کے مسافر

تحریر:پروفیسر محمد عبداللہ بھٹی۔۔۔۔

PROF ABDULLAH BHATTI

میں روزانہ کی طرح اپنے دفتر پہنچا تو حسب ِ معمول چند لوگ مختلف گروپوں میں اِدھر ادھر میرے انتظار میں تھے
آنے والے مختلف بنچوں اور ٹولیوں میں اِس انتظار میں تھے کہ میں پہلے کس سے ملتا ہوں
میں نے جب آنے والے لوگوں پر نظر دوڑائی تو اِسی دوران ملازم نے آکر کہا جناب وہ سامنے جو ماں بیٹی بیٹھی ہیں وہ صبح سویرے سب سے پہلے کی آئی ہوئی ہیں آپ برائے مہربانی پہلے اُن سے مل لیں
لہذا میرے قدم اب اُس عورت اور بیٹی کی طرف اٹھ گئے میں نے قریب پہنچا تو ماں بیٹی میرے احترام میں اٹھ کھڑی ہوئیں ماں کی عمر پچاس سال سے زیادہ جبکہ بیٹی بیس سال کے لگ بھگ ہو گی
ماں کے چہرے آنکھوں اور جسمانی خدوخال سے بڑھاپا جھلکتا نظر آرہا تھا
چہرے کی زردی اور جسمانی اعضا کی بے ترتیبی یہ بھی بتا رہی تھی کہ بڑھتی عمر غربت خوراک کی کمی سے قوت مدافعت کمزور پڑنے سے جسم بیماریوں کی آما جگاہ بنتا نظر آرہا تھا
چہرے پر زندگی کی لالی کی جگہ زردی اور سیاہی میرے خیال کی تصویف کر رہی تھی آنکھوں اور جسم سے نشر ہوتا خوف بتا رہا تھا کہ عورت غربت اور بیوگی کے پل صراط سے گزر رہی ہے
کیونکہ امیر خاندان کی عورتوں میں خاص قسم کا احساس تفاخر نظر آتا ہے یہی فخر اُن کے اعتماد کا باعث بنتا ہے
اِس عورت کے چہرے اور آنکھوں میں پرانے کھنڈرات کی بے بسی پراسراریت سی تھی جو اُس کی لاچارگی کا چلتا پھرتا اشتہار تھا
اب میری نظر جوان بیٹی کے چہرے پر پڑی تو یہاں بھی جوانی کی طغیانی طوفان سرخی حرارت پھرتی تو دور کی بات خاموش سناٹے کی کیفیت طاری تھی
دونوں کی ذبوں حالی بتا رہی تھی کہ دونوں کے ساتھ تقدیر زندگی نے اچھا نہیں کیا
زندگی اپنی تمام تر تلخ بھیانک حقیقتوں کے ساتھ دونوں پر وارد تھی
اِس سے دونوں اب زندگی کے خوبصورت رنگوں اور بہاروں کے لیے اِس تلاش میں تھیں کہ کس طرح اُن کی بے رنگ زندگی میں بھی دلکش رنگ آجائیں
دونوں کی حالت زار دیکھ کر میری ہمدردی اور شفقت کی تمام حسیں بیدار ہو گئیں میں میٹھے شفیق لہجے میں بولا جی باجی اور بیٹی بتائیں میں آپ دونوں کی کیا مدد کر سکتا ہوں
مجھے پتہ چلا ہے کہ آپ بہت صبح سویرے آگئی تھیں جبکہ میں تو اِس وقت آتا ہوں
تو ماں بولی پروفیسر صاحب کوئی بات نہیں شکرہے آپ آگئے ہمیں تو خوف ہو رہاتھا کہ پتہ نہیں آپ نے آج آناہے کہ نہیں
آپ آگئے تو جان میں جان آگئی ہے پروفیسر صاحب میں یہاں جو بھی لوگ آتے ہیں اِن سب سے زیادہ پریشان تکلیف دکھ میں ہوں
بلکہ آپ کی زندگی میں شاید ہی میرے جیسی دکھی عورت آئی ہوگی
میں مسلسل غربت اور مسائل کی چکی میںپیس رہی ہوں خوشی سکون راحت کے لیے در بدر بھیک مانگ رہی ہوں
لیکن شاید خوشیاں اور خوشگوار زندگی مُجھ سے روٹھ چکی ہے اب دامن مراد پھیلائے آپ کے در پر آئی ہوں
سر مجھے بہت سارا وقت چاہیے تاکہ میں تفصیل سے آپ کو اپنی زندگی کے غم سنا سکوں
آپ برائے مہربانی باقی لوگوں سے مل لیں ہم انتظار کر لیتی ہیں جیسے ہی آپ فری ہو نگے ہم سے تفصیل سے مل لیجئے گا
میں نے بہت سمجھایا کہ آپ پہلے مل لیں لیکن عورت بضد رہی کہ نہیں پہلے آپ باقی لوگوں سے مل لیں
پھر آرام سے میری بات سنیں میں نے عورت کو بہت سمجھایا لیکن جب وہ نہ مانی تو دوسرے لوگوں کی طرف متوجہ ہو گیا
میں اِس عورت اور بیٹی کو بھی عام غربت اور بیٹی کی شادی نہ ہو نا رشتے نہ آنا یا رشتوں کا آکر ٹھکرا کر چلے جانا سمجھا
لیکن بعد میں یہ کیس بہت ہی حیران کن اور مختلف نکلا میں جس کے بارے میں سوچ بھی نہیں سکتا تھا
زندگی کا وہ پہلو سامنے آیا کہ میرے ہوش ہی اُڑ گئے دونوں ماں بیٹی سامنے بینچ پر خاموش بیٹھی تھیں میں دوسر ے لوگوں سے مل رہا تھا
اِس دوران جب بھی دونوں پر نظر پڑتی تو دونوں میں خاموشی اور بے گانگی کی چادر تنی ہو ئی تھی
دونوں بینچ کے آخری کناروں پر ایک دوسرے سے بے خبر بیٹھی تھیں
دونوں کا اِس طرح خاموشی سے بیٹھنا میرے لیے بہت حیران کن تھا
کیونکہ ایک سے زائد عورتیں کسی جگہ پر موجود ہوں اور دونوں کے منہ پر تالے لگے ہوں یہ نہ ماننے والی بات تھی
اب میں نے دونوں ماں بیٹی کو سنجیدگی سے دیکھنا شروع کر دیا
دو گھنٹے گزر گئے لوگوںکا رش بڑھتا جا رہا تھا لیکن دونوں صبر سے بیٹھی ہو ئی تھیں
میں ذہنی طور پر تیار تھا کہ یہ جیسے ہی ملنے کا کہیں گی میں فوری طور پر مل کر کوئی وظیفہ بتا کر فارغ کر دوں گا
لیکن وہ تو شائد صبرکا ڈرم پی کر آئی تھیں
اِسی دوران کوئی شخص مٹھائی لے کر آیا تو میں نے حسب معمول لوگوں میں بانٹنے کا کہا
اور بانٹنے والے کو اشارہ کیا کہ وہ سامنے ماں بیٹی صبح سے بیٹھی ہیں پہلے جا کر اُن کو دو
دونوں شاید بھوک کا شکار تھیں اِس لیے مٹھائی اٹھا کر کھانا شروع کر دی
جب مٹھائی سب میں بانٹنے کے بعد بچ گئی تو میں نے اشارہ کیا جا کر دونوں کے درمیان رکھ دے
اور اشارے سے کہا باجی آپ صبح سے بھوکی ہیں کھا کر اپنی بھوک کو مٹائیں
میرے اشارے پردونوں نے مٹھا ئی کھانا شروع کر دی
میں لوگوں سے ملنے میں مصروف رہا پانچ گھنٹے گزر گئے تو میں دونوں کی طرف گیا
اور جا کر بیچ کے کنارے پر بیٹھ کر بولا دیکھیں باجی اگر آپ اِس انتظار میں ہیں کہ لوگ ختم ہو جائیں گے تو آپ بہت بڑی غلط فہمی کا شکار ہیں
یہ لوگوں کی سپلائی تو مغرب تک اِسی طرح جاری بلکہ زیادہ ہو تی جائے گی
مجھے آپ کو اِس طرح ہی دیکھ کر بہت دکھ ہو رہا ہے آپ برائے مہربانی اپنی بات کریں
اگر مجھے سمجھ آئی تو آپ کو مشورہ دوں گا یا دعا دے کر واپس بھیج دوں گا
میرے اصرار کر نے پر عورت اپنا مسئلہ سنا نے پر تیار ہو گئی پھر خوف میں لتھڑے لہجے اور کانپتی آواز سے بولی
آپ وعدہ کریں کہ میری پوری بات سنیں بغیر مجھے اٹھا کر واپس نہیں بھیجوں گے بلکہ میری مدد اور مشورہ دیں گے آپ کو اللہ نبی ؐ کا واسطہ وعدہ کریں آپ میری مدد کریں گے
عورت التجا یہ لہجے میں رو رو کر ایک ہی بات کہ میری پوری بات سن کر مدد کی بھی کوشش کروں گا تو میں نے وعدہ کیا باجی آپ بے فکر ہو کر بات کریں میں پو ری کو شش کروں گا کہ آپ تسلی سے تفصیل سے اپنا مسئلہ بیان کریں
میں بھی اُس کو روتا دیکھ کرپریشان ہو گیا تھا کہ آخر مسئلہ کیا ہے
عورت نے بولنا شروع کیا سر میں اِس بھردنیا میں اکیلی ہو ں نہ بہن نہ بھائی نہ ماں نہ باپ نہ خاوند صرف میں اور میری یہ بیٹی ہے
ذریعہ معاش کوئی نہیں خاندانی پراپرٹی بھی نہیں ہے والدین یا خاوند سے وراثت میں بھی کچھ نہیں ملا
زندگی کی بھاری زنگ آلودہ گاڑی کو چلانے کے کچھ جو پاپڑ بیلتی آئی ہوں یہ میں ہی جانتی ہوں میں ان پڑھ ہوں میری بیٹی میڑک پاس ہے یہ چھوٹے بچوں کو ٹیوشن پڑھاتی ہے جس سے ہمارا مشکل سے گزارا ہوتا ہے
ایک سال سے میں شوگر جگر کی مریضہ ہوں اب پیسے زیادہ چاہیے اب میںاپنا خاندانی کام پیشہ اپنی بیٹی سے کرانا چاہتی ہے کیونکہ مرتے وقت حرام بھی حلال ہو جا تا ہے لیکن میری بیٹی گستاخ ہے نہیں مانتی
میں کسی مولوی کے پاس نہیں ایک درویش کے پاس آئی ہوں میری بیٹی کو سمجھائیں اور میری بات مانے تو میں بولا باجی آپ کا خاندانی کا م کیا ہے تو بیٹی روتے ہوئے بولی یہ طوائف اور میں طوائف زادی ہوں یہ مجھے جسم فروشی پر مجبور کرر ہی ہیں ۔ ( جاری )

تبصرے