Urdu News and Media Website

ایک اور این آر او لانے کی کوشش کی جارہی ہے، عمران خان

اسلام آباد (نیوزنامہ ) پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان نے کہا ہے کہ ایک اور این آر او لانے کی کوشش کی جارہی ہے، این آر او دینے کی کوشش کی گئی تو سڑکوں پر ہوں گے،اسحاق ڈار پاکستان اور دبئی میں نواز شریف کے فرنٹ مین ہیں، امریکا میں ان کا فرنٹ مین سعید شیخ ہے،جب اسحاق ڈار اسکوٹر پر پھرتا تھا تو میں اس وقت لندن میں فلیٹ لے رہاتھا،نوازشریف قوم کو پاگل سمجھتا ہے،حدیبیہ پیپر ملز پر جے آئی ٹی میں کئی چیزیں نکل آئی ہیں، اگر ثبوت نکل آئے تو کیس دوبارہ کھل جاتا ہے، دونوں باپ بیٹی صرف سپریم کورٹ کو نشانہ بنارہے ہیں، سپریم کورٹ کو یقین دلاتا ہوں پوری قوم ان کے ساتھ کھڑی ہیپاناما اور اقامہ کرپشن کے پہاڑ کا ایک چھوٹا سے حصہ ہیں۔ جمعہ کو اسلام آباد میں پریس کانفرنس کے دوران عمران خان نے سابق وزیرخزانہ اسحاق ڈار کو سابق وزیراعظم نواز شریف کا فرنٹ مین قرار دیتے ہوئے کہا کہ یہ ایک پورا مافیا ہے۔ انہوں نے کہا اسحاق ڈار پاکستان اور دبئی میں نواز شریف کے فرنٹ مین ہیں، جنہیں ملک سے نکالنے کے لیے شاہد خاقان عباسی کا جہاز دیا گیا، جبکہ امریکا میں ان کا فرنٹ مین سعید شیخ ہے۔جب اسحاق ڈار اسکوٹر پر پھرتا تھا تو میں اس وقت لندن میں فلیٹ لے رہاتھا۔پی ٹی آئی چیئرمین نے کہا کہ اسحاق ڈار کی ایک کمپنی ایچ ٹی ایس کے دبئی میں 52 ولاز ہیں اور ترکی، عمان، سوئٹزرلینڈ اور انگلینڈ سے بھی اسحاق ڈار کی کمپنی میں پیسے آرہے ہیں۔ کمپنی میں دیگر ملکوں سے بھی پیسے آرہے ہیں، اس کا مطلب یہ ہے کہ دیگر ملکوں میں بھی کمپنیاں ہیں۔عمران خان نے اسحاق ڈار کے استعفی کے بعد نئے وزیر خزانہ کی تقرری نہ ہونے پر کہا کہ حکومت نے نیاوزیر خزانہ نہیں بنایا بلکہ ایڈوائزر لگادیا ہے۔انہوں نے کہا ایل این جی کا کنٹریکٹ 15 ارب ڈالر کا ہے اور کہا جارہا ہے کہ ایل این جی کنٹریکٹ کنفیڈنشل کنٹریکٹ ہے۔ انہوں نے سوال کیا، کیا پبلک کے پیسے پر بھی کوئی کنفیڈنشل کنٹریکٹ ہوتا ہے؟،عمران خان نے کہا ان کو ڈر ہے کہ ان کا باقی پیسا جو دیگر ملکوں میں ہے وہ سارا پتا چل جائے گا، یہ ایک پورا مافیا ہے، یہ سب آپس میں ملے ہوئے ہیں اور انہوں نے ادارے تباہ کردیئے ہیں لیکن اب چیزیں سامنے آرہی ہیں۔پی ٹی آئی چیئرمین نے کہا،نوازشریف قوم کو پاگل سمجھتا ہے، آج ان کے ولاز ہیں اور میرے پاس لندن کا فلیٹ بھی نہیں ہے جبکہ میں نے 40 سال پرانے کنٹریکٹ دکھائے اور یہ بھی بتایا کہ فلیٹ کیسے بکا۔عمران خان نے کہا کہ اقامہ منی لانڈرنگ کا ایک طریقہ ہے جبکہ اصل منی ٹریل حدیبیہ پیپر ملز کیس ہے۔انہوں نے کہا حدیبیہ پیپر ملز پر جے آئی ٹی میں کئی چیزیں نکل آئی ہیں، اگر ثبوت نکل آئے تو کیس دوبارہ کھل جاتا ہے۔

تبصرے