یوم حق خودارادیت کے موقع پرریلی کا انعقاد

لاہور(نیوزنامہ) جموں وکشمیرلبریشن سیل ریسرچ ونگ لاہور کے زیراہتمام یوم حق خودارادیت کے موقع پرحق خودارادیت ریلی کا انعقاد کیا گیا جس میں مختلف سیاسی وسماجی جماعتوں کے رہنمائوں، کارکنوں اور سول سوسائٹی کے اراکین کی بڑی تعدا دنے شرکت کی۔ ریلی سے خطاب کرتے ہوئے مقررین نے کہا ہے کہ بھارت نے کشمیر یوں کو حق خودارادیت سے محروم کرتے ہوئے درحقیقت اپنی بربادی کی بنیاد رکھ دی ہے اور وہ دن دور نہیں جب مودی کے ہاتھوں بھارت پوری طرح برباد ہوجائے گا۔ یوم حق خودارادیت ریلی سے انچارج ریسرچ ونگ سردار ساجد محمود، تحریک انصاف کے رہنما فاروق آزاد، مسلم لیگ ن کے رہنما غلام عباس میر،ہیومن رائٹس ایسوسی ایشن آف پاکستان کے سیکرٹری جنرل اے ایم شکوری، گرین پاکستان کے رہنما طارق محمود مغل،تحریک محافظ کشمیر کے رہنما راجہ ابرار، سابق سیکرٹری جنرل جمعیت علمائے پاکستان آغا رب نواز خان درانی اور دیگر نے خطاب کیا۔ سردار ساجد محمود نے کہا کہ مسئلہ کشمیر حل نہ ہونے کی صورت میں دوایٹمی طاقتوں کے درمیان جنگ چھڑ جانے کا خطرہ ہے جس کی تمام تر ذمہ داری عالمی برادری پر عائدہوگی ۔ انہوںنے کہا کہ عالمی برادری اپنی روش چھوڑکربھارت پر دبائو ڈالے کہ وہ کشمیریوں کے جائز اور مسلمہ حق کو تسلیم کرتے ہوئے مقبوضہ کشمیرمیں سے اپنی فوجیں باہر نکالے تاکہ ڈیڑھ کروڑ سے زائد کشمیری اپنی مرضی کے مطابق اپنے مستقبل کا فیصلہ کرسکیں۔ انہوںنے کہا کہ مودی کی صورت میں بھارت پر ایسا شخص وزیراعظم مسلط ہے جو کشمیرپرقبضے کو مستحکم اور سارے خطے کو تسخیر کرنے کی ہوس میں خود بھارت کے ٹکڑے کررہاہے۔ فارو ق آزاد نے کہا کہ بھارت کنٹرول لائن پر بلااشتعال فائرنگ سے ہمارے صبر کا امتحان نہ لے۔پاک فوج اور پاکستانی عوام کشمیر کے لئے بھارت سے جنگ کرنے کے لئے مکمل طور پر تیار ہیں۔ کشمیر کل بھی پاکستان کا حصہ تھا ، آج بھی ہے اور ہمیشہ رہے گا۔ دنیا کی کوئی طاقت کشمیر کو پاکستان سے جدانہیں کرسکتی۔غلام عباس میر نے کہا کہ اقوام متحدہ کوڈیڑھ کروڑ کشمیریوں کے مستقبل سے کھیلنے کے بجائے اپنی دودرجن کے لگ بھگ قراردادوں کی روشنی میںبھارت کومجبورکرنا چاہیے کہ وہ کشمیریوں کو ان کا پیدائشی حق دینے کے لئے آزادانہ استصواب رائے کے انعقاد کو عمل میں لائے۔ اگر ایسا نہ کیا گیا تو مسئلہ کشمیر کا آتش فشان پورے جنوبی ایشیا کے امن کو تہ بالا کرڈالے گا۔ اے ایم شکوری نے کہا کہ انسانی حقوق کے عالمی اداروں کو کشمیر کے اندر بھارتی فوج کے ہاتھوں انسانی حقوق کی بدترین پامالیوں پرایکشن لیتے ہوئے عالمی برادری اور اقوام متحدہ کومجبور کرنا چاہیے کہ وہ کشمیر کے حوالے سے اپنی قراردادوں پر عمل درآمد یقینی بنائیں اور بھارت پردبائوڈالیں کہ وہ فوری طور پر کشمیر میں سے اپنی فوجیں نکال باہر کرے۔ اس موقع پر سردارساجد محمود نے مندرجہ ذیل قراردادیں پیش کیں ۔ پہلی قرارداد میں کہا گیا کہ حق خودارادیت ریلی کے شرکا یوم حق خودارادیت کے موقع پر اقوام متحدہ کی سکیورٹی کونسل کے کمیشن فار انڈیا و پاکستان کی طرف سے 05جنوری 1949کی قراردادکے تسلسل میں اقوام متحدہ سے یہ بھرپور مطالبہ کرتے ہیںکہ کشمیری عوام کو اقوام متحدہ کی نگرانی میں رائے شماری کا موقع فراہم کیا جائے۔دوسری قرارداد میں کہا گیا کہ حق خودارادیت اقوام متحدہ کے چارٹر اور سلامتی کونسل کی قراردادوں کی روشنی میں کشمیری عوام کا پیدائشی حق ہے اور ہم اس بات کا عہد کرتے ہیں کہ مقبوضہ کشمیر کے بھائیوں کے ساتھ حق خود ارادیت کی جدوجہد میں شانہ بشانہ کھڑے رہیں گے اور کسی بھی قربانی سے دریغ نہیں کریں گے۔تیسری قرارداد میں کہا گیا کہ یہ اجتماع مقبوضہ کشمیر پر بھارت کے جابرانہ و غاصبانہ قبضہ کی مذمت کرتا ہے اور اقوام متحدہ سے حق خودارادیت کے حصول کے لیے جدوجہد کرنے والے کشمیری عوام پر بھارت کی طرف سے بدترین مظالم کا نوٹس لینے کا بھرپور مطالبہ کرتا ہے۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.