افعان طالبان کے وفد کی وزیراعظم عمران خان اور آرمی چیف سے ملاقات

11

اسلام آباد ( صابر مغل ) افغان طالبان کے وفد کی وزیر اعظم ہاؤس میں وزیراعظم عمران خان اور آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ سے ملاقات .ملاقات میں ڈی جی آئی ایس آئی بهی موجود تھے.طالبان وفد کی پاکستان کی سول و ملٹری قیادت سے افغانستان میں قیام امن کے حوالے سے پہلی ملاقات ہے.افغان طالبان کے گیارہ رکنی وفد کی قیادت ملاعبدالغنی برادر نے کی.ذرائع کے مطابق وزیراعظم عمران خان نے طالبان وفد پر زور دیا کہ افغانستان میں دیرپا امن کے لئے جاری بات چیت کو منطقی انجام تک پہنچانے کے لیے ہر ممکن کوشش کریں گے. جنگ کی بات حل نہیں ہے.طالبان وفد نے بھی امن معاہدے کی تکمیل کا عزم ظاہر کرتے ہوئے اپنے تحفظات اور ڈیمانڈز رکھی ہیں جو عبوری اقدامات سے متعلق ہیں. توقع ہے کہ اس ملاقات کے بعد امریکی سفارت خانے میں موجود زلمے خلیل زاد سے بهی ملاقات ہو سکتی ہے.کچه عرصہ قبل افغان طالبان اور امریکہ کے درمیان طے پائے جاتے والے معاہدہ میں افغان حکومت کو شامل نہیں کیا گیا تھا اور امریکی اسٹیبلشمنٹ کو بھی تحفظات تھے جس پر تحریر کردہ معاہدہ پر فریقین کے دستخط نہ ہو سکے.روس.چین اور ایران بهی چاہتے ہیں کہ امن معاہدے میں حکومت کے ساتھ طالبان بهی شامل ہوں. پاکستانی اعلیٰ قیادت کی براہ راست مذاکرات میں مداخلت پر کسی بڑے بریک تھرو کی توقع کی جا رہی ہے .واضح رہے کہ طالبان کی قیادت کرنے والے ملا برادر کو آٹھ سال پاکستان میں قید کے بعد ذلمے خلیل زاد کی مداخلت پر ہی رہا کیا گیا تھا.پاکستان بهی چاہتا ہے کہ افغانستان میں طالبان کے اشتراک سے حکومت قائم ہو تاکہ اس ملک کی سر زمین اس کے خلاف ملک دشمن استعمال نہ کر سکیں .اب امریکہ کے بهی تمام ادارے امن معاہدے پر متفق ہیں.

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.